Get out of the Dark Web

Get out of the Dark Web


Free Youtube Video Downloader

آج سے کئی سال پہلے ۳ دسمبر ۹۹۹۱ کو مشرف دور میں جب جاوید اقبال نامی شخص نے لاہور میں ۰۰۱ بچوں کیساتھ جنسی تشدد کر کے انہیں مار دیا تھا اسکی گرفcتاری کے بعد مشرف نے ایک بہت اہم بات کہی تھی کہ محلے میں کریلے گوشت بن جائےتو ورے محلے کو پتہ چل جاتا ہے یہ کیسے ممکن ہے کہ ۰۰۱ بچوں کا قاتل ایک محلے میں رہ رہا ہو اور کسی کو خبر نہ ہو۔یہی حال موجودہ کیس میں بھی ہے۔یہ کیسے ممکن ہے ہے کہ عمران
علی نامی شخص ایک غریب محلے میں مستری بن کر مافیا گیری کرے اور کسی کو شک بھی نہ گزرے۔یہ کوئی چائینہ تھوڑی ہے جہاں ڈرائیور، ترکان اور صفائی والے تک سب کا بینک اکاوٗنٹ ضروری ہے، یہ تو پاکستا ن ہے جہاں کوئی اکاوٗنٹ تب کھولتا ہے جب اسکی کسی سرکاری یا نجی ادارے میں ملازمت لگتی ہے پھر وہ اپنا اکاوٗنٹ کھلواتا ہے اور پہلیتنخواہ پہ باقاعدہ مبارک بادی دی جاتی ہے ۔سارا محلہ جان جاتا ہے لیکن ایک مستری کو اکاوٗنٹ کی بھلا کیا ضرورت اور ہے تو وہ ایک بہت ہی مقبول اعلی پائے کا مستری ہو گا جسکے پاس کافی ٹھیکے بھی ہونگے اور ہوتے ہوتے ۰۸ کے قریب ملکی اور غیر ملکی اکاوٗنٹس بھی بنا لیے ہونگے۔۔یہ بات خود میں ہی ایک بہت بڑا مذاق ہے اور ثابت کرتی ہے کہ یا تو محلے والے سب ملے ہوئے ہیں یا پھر پاکستانی ہی نہیں ہیں کیونکہ پاکستانیوں کا زیادہ کا م تو دوسروں کے کام سے ہوتا ہے۔یہ تو تصویرکا محض ایک معاشرتی حصہ ہے۔پوری کہانی سمجھنے کیلیئے کچھ بنیادی باتوں کا ذکر ضروری ہے۔
انٹرنیٹ کے تین بڑے حصے ہیں۔۱) surface netجو کہ ہم سب استعمال کرتے ہیں۔اسکا حجم محض چار فیصد ہے۔اس میں روزمرہ کے سارے کام انجام ہوتے ہیں جیسے فیس بک ، گوگل سرچنگ وغیرہ۔۲)ڈیپ ویب ۔یہ وہ تمام سائٹس ہیں جو کہ عام استعمال کیلیئے نہیں ہیں۔ان میں بینک ریکارڈز، اکیڈیمک معلومات وغیرہ پائی جاتی ہیں۔ان تک رسائی اس وقت ممکن ہے جب ہم اس ادارے میں ملازمت کرتے ہوں یا انکے پاس ورڈ ز اور یوزر آئی ڈیز ہمارے پاس ہوں۔۳) ڈارک ویب۔یہ انٹر نیٹ کا سب گہرا حصہ ہے جہاں تک پہنچنا ناممکن ہے۔یہ عجیب شیطانیت بھری دنیا ہے یہاں تمام غیر اخلاقی اور غیر قانونی کاروبار ہوتے ہیں۔یہاں تک رسائی کیلیئے کسی عام براوٗزر کا استعمال بے معنی ہیں۔یہاں سب سے خطر ناک کھیل ہومن آرگنز کی سمگلنگ کا ہے۔اور ان میں child pornography سب سے مقبول ترین کاروبار ہے۔پاکتسان میں اب تک اس نوعیت کے تین بڑے کیسس ہو چکے ہیں۔جاوید اقبال مغل جس نے ایک ویڈیو گیم سنٹر بنایا ہوا تھا جم میں وہ بچوں کو پھانس انہیں پیسے دے کر جنسی تشدد کر کے انکی لاشوں کو تیزاب میں جلا دیتا تھا اور ویڈیو ز child pornographic والوں کو بیچ دیا کرتا تھا۔اس نے اپنے جرم کا کھل کر خود ہی اعتراف کیاتھا اور بعد میں
اسے جیل میں زہر کھلا کر مار دیا گیا تھا ۔دوسرا واقعہ قصور میں چند اہم سیاسی شخصیات اور پولیس کی ایماء پر ۶۰۰۲ سے ۵۱۰۲ تک ۰۰۳ بچوں کا جنسی تشدد ج کر کے انکی ویڈیوزفروخت کر کے ہوتا رہا اور مجرم تا حال آزاد ہیں۔تیسرا واقعہ حال ہی میں قصور میں زینب کے اغوا، تشدد اور قتل کا ہے جسکے مرکزی ملزم کو نفسیاتی مریض اور مستری بتا کر گرفتار تو کر لیا ہے لیکن اب اسے بھی جاوید اقبال کیطرح زہر کھلا کر مار دیا جائے گا اور یہ سلسلہ چلتا رہےگا۔یہ قوم دنیا کی ناسمجھ ترین لوگوں کی ایک ایسی قوم ہے جو نہ صرف بے وقوف ہے بلکہ حد درجہ بھلکڑ بھی۔یہ ظلم کو ثواب سمجھ کر سہتی ہے۔آپ جب چاہیں انکے دماغ سے پرانے زخم کرچ کر نئے ثبت کر سکتے ہیں۔جب بھی ایسا کوئی کیس سامنے آتا ہے تو مذہبی اور لبرلز کی تکرار سامنے آجاتی ہے اور پھر سوسائٹی کو Frustrated کہہ کر مجرم کو نفسیاتی مریض بتا کر مار دیا جاتا ہے۔جبکہ اصل میں یہ ایک ملٹی ٹریلین کاروبار ہے۔اسے امیر ترین لوگ شوقیہ
چلاتے ہیں اور غریب لوگ پیسے کی لالچ میں ڈارک ویب میں دھنستے چلے جاتے ہیں۔ابھی حال ہی میں عمران علی نامی ملزم کے ایک اکاوٗنٹ سے ۰۰۰۶۱ Euro نکالے گئے، اب ظاہے ہے ایک مستری یا نفسیاتی مریض اتنے پیسے اپنی پوری زندگی میں جمع نہین کر سکتا۔تو ثابت ہوا کہ یہ مجرم ایک کڑی ہے جس سے قصور کے باقی تین سو بچوں کے قاتل ڈھونڈے جا سکتے ہیں۔جسٹس ثاقب نذیر صاحب سے درخواست ہے کہ وہ مجرم کو پولیس کی پشت پناہی اور سیاسی اثر ورسوخ سے دور رکھیں اور اکاوٗنٹس کی تفصیلات کیلیئے کمیٹیاں بنانے کے بجائے مجرم کو تفتیش کیلیئے خفیہ ایجینسیز اور عسکری اداروں کے حوالے کریں کیونکہ پولیس اب قابل بھروسہ نہیں رہی۔والدین اور اہل محلہ بھی یہ نکتہ سمجھیں کہ بدقسمتی سے ہمارا خاندانی نظام جو کہ مشرقی روایات کی پہچان تھا اب مغربی دلدل میں پھنس چکا ہے اسلیئے اپنے بچوں کو اس نظام کی اچھائیوں کیساتھ ساتھ برائیوں کی نشان دہی بھی کروائیں، عمرہ ، حج ، عباداتسے زیادہ ضروری اپنے بچوں کی عزت کا تحفظ ہے۔امین انصاری صاحب اور ایسے تمام والدین پہلے اپنے بچوں کی بہتر حفاظت کریں
اور جب سرخرو ہو جائیں اور مطمئن ہو جائیں تو رب کے دربار ماتھا ٹیکنے میں کوئی حرج نہیں۔اور آخ ر میں ہم عوام کہ جو کہ ہر سانحے پر دو دن کا سوگ منا کر اگلے دن کسی نئی کہانی کی پیاس میں رہتے ہیں ان سے گزارش ہے کہ ایسے واقعات کو نفسیاتی رنگ دے کر معاشرے کی حبس زدگی پر بحث کرنے کے بجائے معاملےکی حقیقت کو قبول کریں اور مجرم کی پھانسی سے زیادہ ضروری اسکی تفتیش کو سمجھیں کیونکہ جب تک پس پشت لوگوں کی معلومات نہیں ہونگی تب تک اس جرم کو روکنا ناممکن ہے۔خداراہ اس شیطانی عمل میں جن لوگوں کا بھی نام آئے انکے خلاف کھل کر آواز اٹھائیں تاکہ ہم ہمارے بچے اور ہمارا معاشرہ اس ڈارک ویب کی شیطانیت سے نکل سکیں۔

Many years earlier, on December 3, 9991, in Musharraf’s era, when a person named Javed Iqbal killed and raped him in Lahore, after killing his children in 001, after his interrogation, Musharraf said a very important thing that he became a fleshy flesh. So, it is possible to find out how 001 children’s murderer is living in a neighborhood and nobody is aware of it. Even then there is also an existing case. How is it possible that Imran
Ali, a person named in a poor neighborhood, may become mafia, and do not get any doubt. It’s a few minutes where everyone’s bank account is required by drivers, tarakers and cleaners, it is not clear where an account opens when it is employed in a public or private institution, then it opens its account and the first Regarding the salary is a regular greeting. All the scholars know, but what is the need for an accountant to be forgotten, and then he will be a very popular high priest who will have a lot of contract and would have been made to make foreign and foreign accounts around 08. . This is a big joke in itself and proves that either the rest of the locals are met or not only Pakistan, because most of Pakistanis are from others’ work. This is just a social part of the picture. It is important to mention some basic things to understand the story.
There are three major parts of the Internet. 1) surface net that we all use. The volume is just four percent. It performs all the daily tasks like Facebook, Google Search etc. 2) Deep Web. These are all sites that are not for common use. They get bank records, academic information etc. It is possible to access them when we work in this institution or have their password and user IDs with us. 3) Dark Web – This is the deepest part of the Internet, where it’s impossible to reach. This strange devil is a world full of all moral and illegal businesses. Use of any common browser for access here is meaningless. Here’s the most dangerous game homogeneous smuggling game, and it has the child pornography the most popular business. There has been three major cases in Pakhtunkhwa so far. Javed Iqbal Mughal, who was made a video game center, used to slaughter his children in Gym and burned his bodies in the acid by giving them sexually violent violence and selling video to child pornographic people. He confessed himself to confess himself and later
He was poisoned in prison by poisoning. Second incident, some of the main political figures in Kasur and their police videos ranging from 6002 to 5102 for sexual abuse of 003 children were released and criminally free. The third incident has recently been kidnapped, tortured and murdered by Zainab in Kasaur, which has been arrested by the main accused, after being informed by Psychologist and Matiari, but now it will also be poisoned as Javed Iqbal. Will be This nation is a nation of the worst among the world’s people who are not only foolish but also brave. It helps to understand the cruelty of cruelty. You can make a new record by wandering old ones with their minds whenever you want. Whenever any such case comes, religious and liberal repetitions arise and then society is killed by telling the psychologist to be called Frustrated. In fact it’s a multi-trillion business. Richest people love it
Run and poor people go to the Dark Web site in the greed of money. Recently, a total of 00061 euros were fired from an accused of Imran Ali’s name, now a patient or psychologist can not collect such money in her entire life. So it was proved that this criminal is a clue that can kill the rest of Kasoor’s murderer’s murder. Justice Saqib Nazir is requested to keep the criminal back from the police and keep away from political influence and instead of making committees for details, instead of committing committees, refer to the secret agencies and the military because investigators are no longer trusted. . Parents and eligibility scholars also understand that unfortunately, our family system, which was known by the East Traditions, is now trapped in the Western Swing, so mark your children as well as the evils of this system, Umrah, Hajj, Worship More important than protect your children’s honor. Amin Ansari and all such parents first protect their children better
And when the red bloodshed and satisfied, there is no blame on the face of the Lord. And in the last year, we are people who celebrate two days on every tragedy and stay in thirst for a new story on the next day, asking them to give psychological color to such incidents rather than discussing the social crisis. Accept the fact and understand the more important investigation of the execution of the perpetrator, because it is impossible to stop this crime till the back of the people. Please open your voice against those people who are named in this devotional process so that we can get our children and our community out of the deviation of this Dark Web.

Pin It

One thought on “Get out of the Dark Web

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *